Saturday, July 9, 2016

دنیائے انسانیت کا روشن چراغ بجھ گیا، عبدالستار ایدھی ہم میں نہ رہے



ممتاز سماجی رہنما  فلاحی تنظیم ایدھی فاؤنڈیشن کے بانی عبدالستار ایدھی کراچی میں انتقال کر گئے ہیں۔ان کی عمر 88 برس تھی اور وہ سنہ 2013 سے گردوں کے عارضے میں مبتلا تھے، گزشتہ کئی روز سے سندھ انسٹیٹیوٹ آف یورولوجی اینڈ ٹرانسپلانٹ (ایس آئی یو ٹی) میں زیرعلاج تھے ۔ عبدالستار ایدھی کے گردے ناکارہ ہوچکے تھے جنہیں ڈائلسز کے دوران سانس کی تکلیف کے باعث وینٹی لیٹر پرمنتقل کیا گیا جہاں 6 گھنٹے کے بعد جمعے کی شب گیارہ بجے ان کا انتقال ہوگیا۔

وزیرِ اعظم نواز شریف نے عبدالستار ایدھی کے انتقال پر ملک بھر میں ایک دن جبکہ حکومتِ سندھ نے تین دن کا سوگ منانے کا اعلان کیا ہے اور اس موقع پر قومی پرچم سرنگوں رہے گا۔حکومتِ پاکستان کے مطابق ایدھی کا جنازہ سرکاری سطح پر منعقد کیا جائے گا اور انھیں بعد از مرگ نشانِ امتیاز دینے کا بھی اعلان کیا گیا ہے۔
ایدھی نے 25 سال قبل ایدھی ویلج میں اپنی قبر تیار کی تھی وہیں ان کی تدفین ہوگی۔ ایدھی کی وصیت کے مطابق ان کی آنکھیں عطیہ کر دی گئی ہیں۔
عبدالستار ایدھی نے 1951 میں کراچی میں ایک ڈسپنسری سے سماجی خدمت کا آغاز کیا تھا اور اب چاروں صوبوں میں ان کی ایمبولینس سروس، لاوارث بچوں اور بزرگ افراد کے لیے مراکز اور منشیات کے عادی لوگوں کی بحالی کے مراکز قائم ہیں۔



Tuesday, December 23, 2014

الحاقِ کشمیر کی بھارتی خفیہ دستاویزات ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ 68 برس سے پوشیدہ راز منظرعام پہ




تحریر: سید عاصم محمود  


راقم نے شعور سنبھالا‘ تو بزرگوں سے یہی سنا کہ بھارت نے ریاست جموں و کشمیر پر غاصبانہ قبضہ کر رکھا ہے۔ چونکہ ریاست کا مہاراجا ہندو تھا لہٰذا اس نے بھارت سے الحاق کر لیا۔ حالانکہ کشمیری مسلمان جو آبادی کا 76 فیصد حصہ تھے‘ قدرتاً ریاست کا الحاق نوزائیدہ مسلم مملکت، پاکستان سے چاہتے تھے۔
بعض پاکستانی رہنمائوں نے اپنی آپ بیتیوں میں دعویٰ کیا ہے‘ بھارتی نائب وزیراعظم‘ پنڈت ولبھ بھائی پٹیل نے پاکستانی وزیراعظم‘ لیاقت علی خان کو پیشکش کی تھی: ’’ہمیں ریاست حیدر آباد دکن دے دی جائے۔ ریاست جموں و کشمیر آپ رکھ لیجیے۔‘‘ تاہم پاکستانی وزیراعظم نے یہ پیش کش رد کر دی۔ یہ ریاست کشمیر کے الحاق ِبھارت سے بعد کی بات ہے۔ بعدازاں پٹیل نے ریاست حیدر آباد دکن پر حملہ کرایا اور اس پر قابض ہو گیا۔
اگر درج بالا دعویٰ مان بھی لیا جائے‘ توکیا یہ بھارتی حکمران طبقے کو

Saturday, December 20, 2014

انٹرنیٹ پر 8قسم کے فراڈ....ہوشیارباش



ممکن ہے یہ تحریر آپ کو ان لوگوں میں شامل ہونے سے بچا دے، جنہیں لٹنے کے بعد پچھتاوا ہوا .. انٹرنیٹ جہاں معلومات اور تفریح کا بہت بڑا ذریعہ ہے وہاں اس پر فراڈیے بھی ہر وقت سرگرم رہتے ہیں۔ وہ انٹرنیٹ پر آپ کی تمام سرگرمیوں پر نظر رکھتے ہیں اور موقع ملتے ہی آپ کودھوکا دے کر لوٹ لیتے ہیں۔ آج کل انٹرنیٹ پر 8قسم کے فراڈ زیادہ کیے جا رہے ہیں۔ ان کی تفصیل دی جا رہی ہے تاکہ آپ انٹرنیٹ استعمال کرتے ہوئے محتاط رہیں اور اگر کوئی فراڈیا آپ کو دھوکا دینے کی کوشش کرے تو آپ اس مضمون میں دیے گئے طریقوں پر عمل کر کے لٹنے سے بچ جائیں۔
1۔ فری ٹرائل آفر یہ فراڈ کیسے کیا جاتا ہے: آپ کسی حیران کن چیز کو ایک مہینہ مفت آزمائشی طور استعمال کرنے کی پیش کش دیکھتے ہیں۔ یہ عموماً دانتوں کو سفید کرنے والی کوئی چیز ہوتی ہے یا وزن کم کرنے کا پروگرام۔ کہا جاتا ہے کہ آپ کو صرف وہ رقم ادا کرنا ہو گی جو اس چیز کو آپ تک پہنچانے میں خرچ ہو گی۔ پیش کش کی تحریرباریک الفاظ میں ایسے رنگ سے چھاپی جاتی ہے جومٹ جاتا ہے اور اس کے نیچے یہ عبارت چُھپائی گئی ہوتی ہے کہ آپ ہر مہینے $79 یا $99 ادا کرنے کے