Tuesday, September 17, 2013

’آئی پیڈ دو اور دو سو ڈالر لو‘


کمپیوٹر اور سافٹ ویئر بنانے والی امریکی کمپنی مائیکروسافٹ نے امریکہ میں صارفین کو راغب کرنے کے لیے ایک مہم شروع کی ہے جس کے تحت لوگ اپنے استعمال شدہ آئی پیڈ کے بدلے کم از کم دو سو ڈالر مالیت کے ٹوکن حاصل کر سکیں گے۔
مائیکرو سافٹ کے مطابق یہ رقم صارف مائیکروسافٹ کی مصنوعات جیسا کہ سرفیس آر ٹی اور سرفیس پرو ٹیبلٹ کمپیوٹر خریدنے میں استعمال کر سکیں گے۔

خیال رہے کہ مائیکرو سافٹ عالمی مارکیٹ میں ٹیبلٹس کی فروخت میں آئی پیڈ بنانے والی ’ایپل کمپنی‘ سے بہت پیچھے ہے۔
امریکہ میں مقیم ایک تجزیہ کار نے آئی پیڈز کی جگہ مائیکروسافٹ کی مصنوعات استعمال کرنے کی پیشکش کے حوالے سے شکوک و شبہات کا اظہار کیا ہے۔
گارٹنر موبائل ڈیوائس کے تجزیہ کار وان بیکر کا کہنا ہے کہ ان سے پوچھا جائے تو لوگ مائیکروسافٹ کی اس پیشکش سے فائدہ اٹھانے کے جواب میں صرف ایک لفظ کہیں گے جو کہ ’نہ‘ ہے۔
انھوں نے کہا ’ایپس کا ایکو سسٹم مائیکرو سافٹ کے لیے ایک مسئلہ ہے اور ان کی جانب سے پیش کی جانے والی پیشکش اس مسئلے کو حل نہیں کرتی‘۔
وان بیکر کے مطابق ونڈوز کے مقابلے میں آئی پیڈز کے لیے بہت سی ایپلیکیشنز دستیاب ہیں جس کی وجہ سے ایپل کو مسابقتی برتری حاصل ہے۔
خیال رہے کہ مائیکروسافٹ نے مئی میں ایک ایسی ویب سائٹ متعارف کروائی تھی جہاں پر آئی پیڈ اور ونڈوز کی ٹیبلٹس کا موازنہ کیا جا سکتا ہے۔
مائیکروسافٹ کو اپنے سرفیس ٹیبلٹ ڈیوائسز فروخت کرنے میں مشکلات کا سامنا ہے۔
اس سال کی پہلی سہ ماہی میں مائیکرو سافٹ نے جہاں نو لاکھ ٹیبلٹس فروخت کیے وہیں ایپل نے ایک کروڑ پچانوے لاکھ آئی پیڈز فروخت کیے۔
سال کی دوسری سہ ماہی میں بھی مائیکروسافٹ صرف تین لاکھ ٹیبلٹس فروخت کر سکا تھا۔





No comments: