Monday, November 3, 2014

کینسر و دل کے دورے کا پتہ لگانے والے آلے کی تیاری شروع


گوگل نے کینسر اور دل کے دورے کا پتہ لگانے والے آلے کی تیاری شروع کر دی ہے۔گوگل کے لائف سائنسز شعبے کے سربراہ اینڈریو کونریڈ نے کیلیفورنیا کے شہر لیگونا بیچ میں گوگل کے نئے آلے کی تفصیلات بتائیں۔ انہوں نے کہا آلے کی تیاری میں نینو ٹیکنالوجی سے
مدد لی جا رہی ہے۔ انتہائی چھوٹے مقناطیسی ذرات کو خون کے ذریعے جسم میں داخل کیا جائے گا اور اسکا جائزہ ایک گھڑی نما آلے سے لیا جائے گا۔ جو کلائی پر باندھا جائے گا۔ یہ آلہ جسم میں کینسر، دل کے ممکنہ دورے اور فالج کے حملے اور دوسری بیماریوں کا سراغ لگائے گا۔


عینک اور گاڑی کے بعد گوگل نے کینسر اور دل کے دورے کا پتہ لگانے والے آلے کی تیاری شروع کر دی ہے۔

کیلیفورنیا: (دنیا نیوز) گوگل کے لائف سائنسز شعبے کے سربراہ اینڈریو کونریڈ نے کیلیفورنیا کے شہر لیگونا بیچ میں گوگل کے نئے آلے کی تفصیلات بتائیں۔ انہوں نے کہا آلے کی تیاری میں نینو ٹیکنالوجی سے مدد لی جا رہی ہے۔ انتہائی چھوٹے مقناطیسی ذرات کو خون کے ذریعے جسم میں داخل کیا جائے گا اور اسکا جائزہ ایک گھڑی نما آلے سے لیا جائے گا۔ جو کلائی پر باندھا جائے گا۔ یہ آلہ جسم میں کینسر، دل کے ممکنہ دورے اور فالج کے حملے اور دوسری بیماریوں کا سراغ لگائے گا۔ - See more at: http://urdu.dunyanews.tv/index.php/ur/Technology/242894#sthash.ykxKNw8m.dpuf
عینک اور گاڑی کے بعد گوگل نے کینسر اور دل کے دورے کا پتہ لگانے والے آلے کی تیاری شروع کر دی ہے۔

کیلیفورنیا: (دنیا نیوز) گوگل کے لائف سائنسز شعبے کے سربراہ اینڈریو کونریڈ نے کیلیفورنیا کے شہر لیگونا بیچ میں گوگل کے نئے آلے کی تفصیلات بتائیں۔ انہوں نے کہا آلے کی تیاری میں نینو ٹیکنالوجی سے مدد لی جا رہی ہے۔ انتہائی چھوٹے مقناطیسی ذرات کو خون کے ذریعے جسم میں داخل کیا جائے گا اور اسکا جائزہ ایک گھڑی نما آلے سے لیا جائے گا۔ جو کلائی پر باندھا جائے گا۔ یہ آلہ جسم میں کینسر، دل کے ممکنہ دورے اور فالج کے حملے اور دوسری بیماریوں کا سراغ لگائے گا۔ - See more at: http://urdu.dunyanews.tv/index.php/ur/Technology/242894#sthash.ykxKNw8m.dpuf
عینک اور گاڑی کے بعد گوگل نے کینسر اور دل کے دورے کا پتہ لگانے والے آلے کی تیاری شروع کر دی ہے۔

کیلیفورنیا: (دنیا نیوز) گوگل کے لائف سائنسز شعبے کے سربراہ اینڈریو کونریڈ نے کیلیفورنیا کے شہر لیگونا بیچ میں گوگل کے نئے آلے کی تفصیلات بتائیں۔ انہوں نے کہا آلے کی تیاری میں نینو ٹیکنالوجی سے مدد لی جا رہی ہے۔ انتہائی چھوٹے مقناطیسی ذرات کو خون کے ذریعے جسم میں داخل کیا جائے گا اور اسکا جائزہ ایک گھڑی نما آلے سے لیا جائے گا۔ جو کلائی پر باندھا جائے گا۔ یہ آلہ جسم میں کینسر، دل کے ممکنہ دورے اور فالج کے حملے اور دوسری بیماریوں کا سراغ لگائے گا۔ - See more at: http://urdu.dunyanews.tv/index.php/ur/Technology/242894#sthash.ykxKNw8m.dpuf

No comments: